ﻣﯿﺮﮮ ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﻧﺎ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ

دوستوں کچھ واقعے عارضی ہوتے ہیں لیکن اس کے پیچھے ایک بہت بڑی مطلب چھپی ہوئی ہوتی ہے۔ آج ہم آج ہم آپ کو ایک ہی معنی خیز واقعہ سناتے ہیں۔ ﮐﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﻏﺎ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﻓﺠﺮ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ : ﺁﺝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯼ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺍﮐﮭﺎﮌ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﺴﭙﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺣﺮﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺷﺮﻋﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ۔

ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﻮﻗﻮﻑ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﻣﻘﺪﻡ ﮨﮯ ۔ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﻼﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟﺍﺫﺍﻥ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﻣﯿﺮﮮ ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﻧﺎ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﮨﻔﺘﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺁﺝ ﺳﮯﺗﻮ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ ﮨﮯ، ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﻮﭺ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺗﺎ ﮐﯿﺎ ﻧﺎ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺿﻌﺪﺍﺭﯼ ﮐﻮ ﭘﺲ ﭘﺸﺖ ﮈﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﻞ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﮉﮦ ﺩﯾﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻮﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﭼﮭﺮﯼ ﭘﮭﯿﺮ ﺩﯾﻨﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﻣﺮﻏﺎ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍٓﭖ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ : ﮐﺎﺵ ﺍﺫﺍﻧﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﻣﺮ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ، ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﺗﻮ ﻧﺎ ﺳﻨﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ۔ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﻌﺬﺭﺕ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ! ﺍﺳﻼﻡ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺁﺝ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺍﻧﮉﮮ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﺌﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺭﮨﮯ ﺳﮩﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺩﺳﺘﺒﺮﺍﺩﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﭼﺎﻟﯿﮟ ﭼﻼﺋﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﺎﺵ ﮨﻢ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﯽ ﺁﺫﺍﻥ ﺩﯾﺘﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﺑﺎﻃﻞ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﻮ ﮔﻠﮯ ﻧﮧ ﻟﮕﺎﺗﮯ۔ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻣﺮﻏﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺴﮯ ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺗﻮ ﮨﻮﺍ، ﮨﻤﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﯾﮧ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺳﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﯾﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ۔ امید کرتے ہیں کہ آج کی تحریر آپ کو ضرور پسند آئی ہوگی مزید اچھی تحریروں کے لئے ہمارے پیج کو فالو اور لائک کریں۔ اور اپنی قیمتی رائے کے بارے میں کمنٹ میں ضرور آگاہ کریں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *