کوفہ شہر میں ایک عورت رہتی تھی جسکے شوہر کو سخت معاشی پریشانی تھی

کسی نے کیا خوب کہا ہے، کہ کامیاب مرد کے پیچے ایک عورت کا ہاتھ ہوتا ہے۔ایک عورت جو کوفہ شہر میں رہتی تھی جس کے گھر میں تنگدستی کے حالات چل رہے تھی۔ ایک دن بیوی اپنے شوہر کو کہنے لگی، بہتر تو یہ ہوگا کہ تم گھر سے نکل کر شہروں میں جاتے، اور اللہ کی راہ میں اپنا رزق روزی تلاش کرتے، یہ سن کر شوہر گھر سے نکلا اور گھومتا پھرتا ملک شام پہنچا، اور وہاں خوب محنت کی اور تین سو درہم کمائے۔

>

جس پر اُس نے ایک بڑی اچھی نسل کی اونٹنی خریدی۔ مگر اس اونٹنی میں عادت خراب تھی جب کام کے لے جات وقت سخت اڑیل نکلی، جس نے اُس ادمی کو خوب پریشان کر دیا۔ جس اس نے قسم اٹھائی کے کوفہ جا کے ایک درہم پر فروخت کرونگا۔ مگر بعد میں بڑا پریشان ہوا اور گھر جا کر بیوی کو ساری بات سنائی، بیوی نے نے کہا کے یہ کونسی بڑی بات ہےاس نے ایک بلی کو پکڑا اور اونٹنی کے گلے میں باندھ دیا، اور کہا بازار جاوں اور یہ آواز لگائو تین سو درہم کی بلی اور اونٹنی ایک درہم کی۔ لیکن ایک بست یاد رکھنا کے دونوں ایک ساتھ فروخت کرنا۔ شوہر نے ایسا ہی کیا ایک دیہاتی اونٹنی کو گھوم پھر کر دیکھ رہا تھا اور کہ رہا تھا کیسی اچھی اونٹنی ہے کتنی خوبصورت ہے کاش تیرے گلے میں یہ بلی نہ ہوتی اب اس سمیت ہی تجھے خریدنا پڑے گا بیوی کی زہانت سے قسم بھی پوری ہو گی اور انٹنی بھی اصل قمیت پر بک گئی۔ اس لئے تو لوگ کہتے ہیں کہ کامیاب مرد کے پیچھے ایک عورت کا ہاتھ ہوتا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.