میرا ﺭﺏ ﻣﯿﺮﯼ ﺣﺎﺿﺮﯼ ﺧﻮﺩ ﻟﮕﺎ ﺩﮮ ﮔﺎ

ایک حدیث پاک ہے جس کا مفہوم یی ہے کہ عمل کا دارومدار نیت پر ہے اگر آپ کا عمل نیک ہے تو اللہ تعالی آپ کو اس عمل کا اجروثواب ضرور دیگا۔ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻢ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﮯ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻣﯿﮟ قید میں ﺗﮭﮯ ۔ ﺟﻤﻌﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻥ ﻧﮩﺎ ﺩﮬﻮ ﮐﺮ ‘ ﺗﯿﻞ ﮐﻨﮕﮭﯽ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺭﮬﺘﮯ ﺟﻮﻧﮩﯽ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﯽ ﺍﺫﺍﻥ ﮬﻮﺗﯽ ‘ ﺗﯿﺰ ﺗﯿﺰ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﺍﻭﺭ قید خانے ﮐﮯ ﻣﯿﻦ ﮔﯿﭧ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﮮ ﮬﻮ ﺟﺎﺗﮯ۔
اور ﭘﻮﺭﯼ ﺍﺫﺍﻥ ﮔﯿﭧ ﮐﯽ ﺳﻼﺧﯿﮟ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺳﻨﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﺟﺎﺗﮯ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ منتظم قید خانہ ‘ ﺟﻮ ﺍُﻥ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻣﻌﻤﻮﻝ دیکھ ﺭہا ﺗﮭﺎ ‘ ﺁﺧﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺣﺎﻓﻆ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺩﻓﺘﺮ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ ،ﺗﻢ ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﮐﺮﺗﮯ ہو ہر ﺟﻤﻌﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻥ؟ ﺟﺐ ﺗﻢ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ہے ﮐﮧ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺑﻨﺪ ہےﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﺎہر ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺳﮑﺘﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﺗﻨﮯ ﺩﻭﺭ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﮬﮯ؟ ﺣﺎﻓﻆ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔ ﺻﺎﺣﺐ ! ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺏ ﮐﺎ ﻣﺠﮭﮯ ﺣﮑﻢ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﯽ ﺍﺫﺍﻥ ﺳﻨﻮ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﺎﻡ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺟﮭﭧ ﭘﭧ ﻣﺴﺠﺪ ﭘﮩﻨﭽﻮ۔ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﯾﮧ ﺣﮑﻢ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮬﻮﮞ، ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮬﻮﮞ ﺍﺱ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﮐﮧ ﺁﮔﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﮐﻮ ﺩیکھ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﺍ ﺭﺏ ﻣﯿﺮﯼ ﺣﺎﺿﺮﯼ ﺧﻮﺩ ﻟﮕﺎ ﺩﮮ ﮔﺎ۔ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ہے ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺍﺳﺘﻄﺎﻋﺖ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﻮجھ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﺍﻟﺘﺎ ۔ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﮬﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﺭﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﺎ ﺍﺟﺮ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎ ﺩﮮ ﮔﺎ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﻣﯿﮟ قید میں ﻇﮩﺮ ﭘﮍﮬﺘﺎ ہوﮞ۔ ﺟﻮ ﭼﯿﺰ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺗﻤﺎﺷﮧ ﻟﮕﺘﯽ ﮬﮯ ﻭﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺩﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮬﮯ۔ ﺑﺲ ﮬﻤﺎﺭﺍ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﮬﻮﻧﺎ ﭼﺎہئے۔ اللہ تعالی ہم سب کو نیک اعمال کرنے کی توفیق عطا فرما۔

>

Sharing is caring!

Comments are closed.