حضرت محمدؐ کی سنت کے مطابق ایک کام کرنے سے پیٹ بڑا نہیں ہوتا

سبحان اللہ ۔۔۔ پیٹ کا باہر نکل جانا ایک ایسا مسئلہ ہے جس سے ہر کوئی آج کل متاثر ہے ہر کوئی چاہتا ہے کہ اس کا پیٹ بلکل اندر رہے اور وہ اس کے لیے مختلف ورزش بھی کرتا ہے لیکن ایسا کرنے میں وہ کامیاب نہیں ہے ہوتا دوستو کیا آپ جانتے ہیں کے ایسا کونسا کام ہے جس کو کیا جائے تو انسان کا پیٹ باہر نہیں نکلتا۔

>

اور ورزش کیے بغیر انسان کس طرح اپنے پیٹ کو اندر کر لیتا ہے۔ اسوہ حسنہؐ کامل نمونہ حیات ہے جس پر عمل پیرا ہونے سے بیک وقت دینی و دنیاوی ثمرات سمیٹے جا سکتے ہیں۔ موٹاپے کے شکار جو افراد مہنگے علاج اور کڑی ورزشوں کے باوجود اس سے نجات پانے میں ناکام ہو چکے ہیں وہ اگرکھانے پینے اور ورزش کے متعلق نبی کریمؐ کی سنت پر عمل کریں تو باآسانی اس سے چھٹکارا پا سکتے ہیں۔ نبی پاکؐ ماہِ رمضان کے علاوہ بھی کئی مواقع پر روزہ رکھتے تھے، جو کہ موٹاپا کم کرنے کے لیے اکسیر عمل ہے۔ اس کے علاوہ حضورؐ نے ہمیشہ بھوک رکھ کر کھانا کھایا اور اسی کا حکم دیا۔ ایک حدیث شریف کا مفہوم ہے کہ ’جب ابھی کچھ بھوک باقی ہو تو کھانے سے ہاتھ کھینچ لیا کرو۔ قرآن مجید میں بھی ارشاد باری تعالیٰ ہے کہ’ کھاؤ اور پیو لیکن اس میں تجاوز نہ کرو، بے شک اللہ تجاوز کرنے والوں کو پسند نہیں کرتا۔ سورة الاعراف، آیت 31‘ ۔ رسول اللہﷺ نے روزہ پانی سے کھولنے کی بھی ہدایت فرمائی، جس کا مطلب ہے کہ ہمیں خالی پیٹ پانی پینا چاہیے اور یہ بات سائنسی اعتبار سے بھی ثابت ہو چکی ہے کہ خالی پیٹ پانی پینے سے موٹاپا کم ہوتا ہے۔ حضورؐ تیز قدموں کے ساتھ چلتے تھے اور یہ ایسا عمل ہے جو موٹاپے سے نجات میں انتہائی مددگار ثابت ہوتا ہے۔ جو لوگ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہوتے ہیں وہ ڈائٹنگ کرتے ہیں اور عموماً ناشتہ ترک کر دیتے ہیں، لیکن رسول اللہ نے فرمایا کہ ”صبح کا کھانا ضرور کھایا کرو، اس میں اللہ کی رحمت ہوتی ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.