جسم فروشی کی عجیب داستان

ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﺎ جو انتہائی نیک بندہ تھا۔ اس نے کبھی بھی ﺯﻧﺪﮔﯽ میں ﮐﺴﯽﻏﯿﺮﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻧﻈﺮ ﺍﭨﮭﺎﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﮐﭽﮫﯾﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻨﮓ ﺩﺳﺖ ﮨﻮﮔﯿﺎ، اس کے گھر کی غربت پروان چڑھ چکی تھی۔ اور ﻧﻮﺑﺖ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﮐﮧ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻓﺎﻗﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﮔﺌﮯ۔ گھر میں ایک وقت کی روٹی بھی ملنا مشکل ہوگی۔
ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺟﻮﺍﻥ ﺑﯿﭩﯽ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯽ، ﺟﺐ ﻓﺎﻗﮯ ﺍﻧﺘﮩﺎ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻟﮍﮐﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮩﻦﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻏﻠﻂ ﻗﺪﻡ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ دل میں ارادہ کرکے گھر سے نکلی کیا اپنا جسم بیچ کر کچھ کھانے کا سامان کرونگی۔اور یوں ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮐﺮ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﭘﮩﻨﭽﯽﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺟﺴﻢ ﻓﺮﻭﺷﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯽ، ﻭﮦ ﻟﮍﮐﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﺟﺎﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽﺍﺩﺍﺋﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﮑﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯼ، ﺗﻮﺟﮧ ﺗﻮ ﺩﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﻃﺮﻑ ﻧﻈﺮ ﺗﮏ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﻟﻮﮒ ﺁﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﯽ ﻃﺮﻑ ﻧﻈﺮ ﺍﭨﮭﺎﺋﮯ ﺑﻨﺎ ﮔﺰﺭﺟﺎﺗﮯ، ﺧﯿﺮ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮭﮍﮮ ﮐﮭﮍﮮ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﺷﺎﻡ ﮨﻮﮔﺌﯽ، ﻭﮦ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﻟﺒﺮﺩﺍﺷﺘﮧ ﮨﻮﮐﺮ ﮔﮭﺮﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﻗﺪﻡ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ ﻟﮓ ﮔﺌﯽ۔ ﺟﺐ ﮔﮭﺮ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﻮ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﭘﺎﯾﺎ، ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ “ﺑﯿﭩﯽ ﺗﻮ ﮐﮩﺎﮞ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ؟

>

ﻟﮍﮐﯽ ﻧﮯ ﺑﺎﭖ ﺳﮯ ﻣﺎﻓﯽ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﻭ ﺭﻭ ﮐﺮ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﺎﺟﺮﺍ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯿﺎﮐﮧ ﺍﺑﻮ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮭﻮﮎ ﺳﮯ ﺑﻠﮑﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮩﻦ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽﺣﺎﻟﺖ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮔﻨﺎﮦ ﮐﺮﻧﮯ ﻧﮑﻞﭘﮍﯼ، ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﻧﻈﺮ ﺗﮏﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﺎﺟﺮﺍ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ،”ﺑﯿﭩﺎ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﻏﯿﺮ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺁﻧﮑﮫ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﺗﮭﺎ
ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﺮﯼﻃﺮﻑ ﻧﻈﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﻈﺮ ﮐﻮ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﭼﺎﺩﺭ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﮈﺍﻟﻮ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻧﻈﺮﺷﮩﻮﺕ ﮐﯽ ﺑﯿﺞ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ، ﺁﺝ ﺗﻢ ﺑﭽﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﮐﻞ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺍﻭﻻﺩﻣﺤﻔﻮﻅ ﺭہے گی۔ یاد رہے کہ زنا ایک قرض ہے آج تم کروگے لیکن اس کے ادائیگی آپ کے گھر سے ہوں گی۔ اگر آپ نے کسی کے گھر کی دروازہ پاؤں سے کھولینے کی کوشش کی۔ تو یاد رکھو کل آپ کے گھر پہ دروازہ بھی اسی طرح ہی کھولی گئی۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *