تجربہ کار سے چلا کی مہنگی پڑ جاتی ہے۔۔۔۔

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) ایک گاؤں میں ایک نواب صاحب رہا کرتے تھے، نواب صاحب بڑے امیر اور بہت سے جائیدادوں کے مالک تھے، ان کی زندگی بڑے اچھی چل رہی تھی۔ آس پاس کے لوگ نواب صاحب سے بہت خوش تھے۔ ایک دن نواب صاحب کی طبیعت خراب ہوگئی، اور وہ بیمار پڑے۔ نواب صاحب کے چوٹی پیشاب بند ہو گئی۔

قریب کےحاکیموں نےسارے نسخے آزمائے لیکن نواب صاحب ٹھیک نہ ہوئے۔ نواب صاحب نے اپنے ملازم حکیم سے کہا کہ وہ قریب کے گاؤں میں منادی کروادے کہ جو ہمیں اس بیماری سے نجات دلائے گا۔ ہم اسے سو اشرفیاں انعام دیں گے بہت سے لوگ انعام کے لالچ میں نواب صاحب کا علاج کرنے آئے۔ مگر کوئی بھی کامیاب نا ہو سکا نواب صاحب کی تکلیف روز بہ بروز بڑھتی جا رہی بڑھتی جا رہی تھی۔ مگر کوئی بھی حکیم ان کاعلاج تلاش نا کر سکا ایک دن ایک بزرگ پھٹے پرانے حال میں حویلی کے گیٹ پر پہنچے اور دربان سے اندر جانے کی اجازت چاہی دربان نے بزرگ کا حلیہ دیکھ کر انھیں بھگانا چاہا مگر بزرگ بضد رہے۔ کہ انھیں نواب صاحب سے ملنا ہےبمشکل تمام دربانوں نے ان بزرگ کو نواب صاحب کے پاس جانے کی اجاز دی وہ بزرگ نواب صاحب کے پاس پہنچے اور علاج کی اجازت چاہی نواب صاحب نے ان کا حلیہ دیکھ کر بے دلی سے اجازت دے دی ان بزرگ نے خربوزے منگوائے اور چھیل کر نواب صاحب کو کھلانا شروع کر دیئے۔ ابھی نواب صاحب نے دو ہی خربوزے کھائے ہونگے کہ انھیں پیشاب کی حاجت ہوئی اور وہ جلدی سے استنجا خانے کے جانب تشریف لے گئے ۔

اور جب ان کی واپسی ہوئی تو ان کے چہرے کا اطمینان بتا رہا تھا کہ وہ تکلیف سے نجات حاصل کر چکے ہیں ان بزرگ نے نواب صاحب سے ان کا حال پوچھا اورتسلی ہونے پر اجازت چاہی اور اپنا انعام طلب کیا نواب صاحب نے بخوشی 100اشرفیاں ان بزرگ کو دے دی۔ نواب صاحب کا ملازم حکیم بھی یہ دیکھ رہا تھا اور سوچ رہا تھا کہ اگر یہ علاج اس کے دماغ میں آجاتا تو یہ اشرفیاں ابھی اس مل چکی ہوتی۔ خیر بزرگ اپنا انعام لے کر اپنی راہ چل پڑے جاتے جاتے دربان کو اپنا پتہ بتا گئے نواب صاحب صحت مند ہو کہ بہت خوش تھے اور انھوں نے ایک بہت بڑی دعوت کا انعقاد کیا جس میں ہر خاص و عام کوعو کیا گیا تھا۔ کچھ ماہ بعد نواب صاحب اسی تکلیف میں دوباہ مبتلا ء ہو گئےہر طرح کا علاج کے باوجود بھی ان کی تکلیف دور نا ہوئی تو انھوں نے دوبارہ منادی کی تجویز دی ان کے حکیم نے کہا کہ بلا وجہ سو اشرفی ضائع کرنے کی ضرورت نہیں آپ خربوزے منگوائیے میں ابھی علاج کئے دیتا ہوں۔ نواب صاحب کے حکم پر دوبارہ خربوزے لائے گئے اور حکیم صاحب نے نواب صاحب کو خربوزے چھیل کر کھلانے شروع کر دئیے۔ مگر اب کی بار خربوزے کھا کر بھی نواب صاحب کی حالت نا سدھر سکی اب حکیم بھی پریشانی میں مبتلا ء ہو گیا کہ اشرفیوں کے لالچ میں وہ کس مصیبت کو دعوت دے بیٹھا ہے وہ بھاگا بھاگا حویلی سے باہر آیا۔ اور سب ملازمین کو جمع کرنے کے بعد منادی کا حکم سنایا ۔

دربان نے جب یہ سنا تو اس نے بتایا کہ وہ حکیم کا پتہ جانتا ہے۔ وہ اسے پکڑ کر لے آئے گا حکیم نے اسے فوراً ان بزرگ کو لانے کا کہا حکیم اور نواب دونوں بے چینی سے بزرگ کا انتظار کرنے لگے بزرگ نواب صاحب کے پاس پہنچے اور ان کی حالت دیکھ کر خربوزے لانے کا کہا۔ نواب صاحب کے حکیم نے کہا کہ وہ نواب صاحب کو خربوزے کھلا چکا ہے بزرگ بضد رہے کہ خربوزے لائے جائیں بلآخر ان کی ضد سے مجبور ہر کر نواب صاحب نے خربوزے لانے کا حکم دیا نواب صاحب کو حاجت محصوس ہوئی۔ اور وہ اپنی حاجت روا کرنے گئےواپسی پر نواب صاحب نے بزرگ کو گلے سے لگا لیا اور اب کی بار ان کی خدمت میں دو سو سونے کی اشرفیاں پیش کی بزرگ نے وہ اشرفیاں لینے سے انکار کیا۔ اور جانے کی رخصت مانگی نواب صاحب نے کہا کہ پہلی بار جب میری طبیعت خراب ہوئی تھی تو آپ نے مجھے خربوزے کھلائے اب کی بار طبیعت خراب ہونے پر وہی علاج میرے حکیم صاحب نے کیا تو اس نے اثر نا کیا۔ لیکن آپ نے آ کر پھر خربوزے سے ہی علاج کر دیا بزرگ نے جواب دیا کہ پہلے جب آ پکی طبیعت خراب ہوئی تھی تو اس موسم میں خربوزے کا گودہ فائدہ مند تھا۔ اور اس موسم میں خربوزے کا چھلکا فائدہ دیتا ہے میرے لیے سو اشرفیاں ہی بہت ہیں یہ اشرفیاں آپ میری طرف سے اپنے حکیم صاحب کو دے دیں نواب صاحب کا حکیم بزرگ کی بات سن کر دل ہی دل میں بہت شرمندہ ہوا بزرگ سے معافی کا طلبگار ہوا اور انکی شاگردگی اختیار کر لی۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *