بغداد کے بڑے بازار میں ایک فقیر نان بائی کی دکان کے سامنے سے گزرا

یہ حکایت کچھ یوں‌ بیان کی جاتی ہے بغداد کے بڑے بازار میں ایک فقیر نان بائی کی دکان کے سامنے سے گزرا جہاں انواع و اقسام کے کھانے بھی چولھے پر چڑھے ہوئے تھے جن سے بھاپ نکل رہی تھی۔ ان کھانوں کی خوش بُو ان کی لذت اور ذائقے کا پتا دی رہی تھی۔ فقیر کا دل للچایا تو اس نے اپنے تھیلے میں سے ایک سوکھی روٹی نکالی اور ایک دیگ کی بھاپ سے اسے نرم کر کے کھانے لگا۔

نان بائی چپ چاپ یہ تماشا دیکھتا رہا۔ جب فقیر کی روٹی ختم ہو گئی اور وہ جانے لگا۔ تو اس کا راستہ روک لیا اور پیسے مانگے۔کون سے پیسے؟ فقیر نے بے بسی اور حیرت سے پوچھا۔ نان بائی نے کہا کہ تُو نے میرے کھانے کی بھاپ کے ساتھ روٹی کھائی ہے اس کی قیمت مانگ رہا ہوں۔ وہاں بہلول دانا بھی موجود تھے اور یہ سب دیکھ رہے تھے۔ انھوں نے مداخلت کی اور نان بائی سے کہا کہ کیا اس غریب آدمی نے تمھارا کھانا کھایا ہے جو پیسے ادا کرے۔ نان بائی نے کہا کھانا تو نہیں کھایا مگر میرے کھانے کی بھاپ سے فائدہ تو اٹھایا ہے، اسی کی قیمت مانگ رہا ہوں۔ اس کی بات سن کر بہلول دانا نے سر ہلایا اور اپنی جیب سے مٹھی بھر سکے نکالے۔ وہ ایک ایک کر کے ان سکوں کو زمین پر گراتے جاتے اور نان بائی کی طرف دیکھ کر کہتے یہ لے پیسوں کی کھنک سمیٹ لے، یہ لے اپنے کھانے کی بھاپ کی قیمت ان سکوں کی کھنک۔ اسے وصول کر لے یہ آواز ہی تیرے کھانے کی خوش بُو کی قیمت ہے۔ وہاں کئی لوگ جمع ہو چکے تھے جو نان بائی کو دیکھ کر ہنس رہے تھے۔ تب حضرت بہلول نے کہا اگر تُو اپنے کھانے کی بھاپ اور خوش بُو بیچے گا تو اس کی یہی قیمت ادا کی جاسکتی ہے، اسے بھی قبول کرنا پڑے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *