بشک دین اسلام میں ہر مسئلے کا حل ہے

اس میں کوئی شک نہیں کہ اسلام ایک مکمل دین ہے، اور یہ ہر دور میں انسان کی رہنمائی کرتا ہے، لیکن ہمیں صرف اس میں چھیے مفہوم کوواضح طور پر سمجھنے کی ضرورت ہے۔ موجودہ کھٹن اور پیچیدہ معاملات کا حل بھی قران کریم، احادیث مبارکہ اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کی زندگیوں سے ڈھونڈا جا سکتا ہے، امریکہ کے ایک اسپتال میں ایک ایسا کیس سامنے آیا۔
ہوا کچھ یوں کے ایک ہی دن پر دو ڈیلیوری کیسے ایک ہی ساتھ آئے۔ ان دو ڈیلیوری کیسز میں ایک لڑکا پیدا ہوا اور ایک لڑکی۔ اب جلدی اور ایمرجنسی کی وجہ سے کس کو کچھ پتہ نہ چلا کہ لڑکا کس کا بیٹا ہے اور یہ لڑکی کس کی بیٹی ہے۔ سب لوگ بہت پریشان تھے، اور ساتھ میں ڈاکٹر بھی۔ اسی ہسپتال میں ایک مصری مسلمان ڈاکٹر بھی تھا۔ جب وہاں پہنچا تو سارے کو پریشان دیکھ کر وجہ پوچھی ڈاکٹرز نے انہیں سارا قصہ بتایا، کیونکہ سارے دوست تھے تو ایک ڈاکٹر نے طنز کے طور پر کہا کہ آپ کہتے ہو کہ اسلام میں ہر مسئلے کا حل ہے، اب یہ مسئلہ بھی حل کر دو آپ اسلام کی رو سے معلوم کر دوں کہ یہ بیٹا کس کا ہے، اور یہ بیٹی کس کی۔ ڈاکٹر نے کہا کہ آپ اطمینان رکھے میں آپ کچھ ہی دیر میں معلومات کرکے آپ کو بتا دوں گا۔ مصری ڈاکٹر نے جیسے تیسے کر کے مصر کے علماء سے رابطہ کیا اور ساری صورت حال سے آگاہ کیا۔ وہاں سے انہوں نے جواب دیا کے ہم طبی معاملات کا تو کوئی علم نہیں البتہ ہم آپ کے سامنے ایک ایات پڑتے ہیں، آپ ان پر غور وہ فکر کرے اگر اللہ نے چاہا تو انشاءاللہ اس سے آپ کا مسئلہ حل ہو جائے گا۔ ان عالم نے مندرجہ ذیل آیات پڑھ کر سنائی، جس کا ترجمہ کا مفہوم یہ تھا۔ مرد کا حصہ دو عورتوں کے برابر ہے (النساء 11)۔

>

اس مصر ڈاکٹر نے اس آیات کے ترجمے پر غور و فکر شروع کر دیا، اور بلا آخر ایک نتیجے پر جا پہنچا۔ مصری ڈاکٹر نے امریکن ڈاکٹر سے کہا کہ اب آپ اطمینان رکھیں آپ کچھ ہی گھنٹوں میں معلوم ہو جائے گا، کہ کون سا بچہ کس کا ہےلیکن سب سے پہلے مجھے ان دونوں ماوں کی دودھ کے ٹیسٹ کا موقع دیا جائے۔ چنانچہ تجزئیے و تحقیق کے نتیجے میں معلوم ہوگیا کہ کون سا بچہ کس عورت کا ہے اور مصری ڈاکٹر نے اپنے غیرمسلم دوست ڈاکٹر کو اس نتیجے سے پورے اعتماد کے ساتھ آگاہ کردیا۔ ڈاکٹر حیران و ششدر تھا کہ آخر یہ کیسے معلوم ہوگیا؟ مصری ڈاکٹر نے بتایا کہ اس تحقیق و تجزئیے کے نتیجے میں جو بات سامنے آئی ہے وہ یہ تھی کہ لڑکے کی ماں میں لڑکی کی ماں کے مقابلے میں دوگنا دودھ پایا گیا۔ مزید برآں لڑکے کی ماں کے دودھ میں نمکیات اور وٹامنز (حیاتین) کی مقدار بھی لڑکی کی ماں کے مقابلے میں دوگنی تھی۔ اس کے بعد مصری ڈاکٹر نے اطمینان بھرے لہجے میں امریکن ڈاکٹر کے سامنے قرآن کریم کی وہ آیات پڑی جس کا ترجمہ و مفہوم یہ تھا مرد کا حصہ دو عورتوں کے برابر ہے۔ اس واقعے کے بعد وہ امریکی ڈاکٹر فوراً ایمان لے آیا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.