ایک مرغ تھا جو ہر صبح آذان دیا کرتا تھا

ایک مرغ تھا جو ہر صبح آذان دیا کرتا تھا اس کا مالک اس کے آذان سے کافی تنگ تھا۔ ایک دن مالک کے صبر کا پیمنہ لبریز ہو گیا ﺍور اس نے مرغے کو ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ اگر آج کے بعد تو نے ﭘﮭﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺫﺍﻥ غلطی سے بھی ﺩﯼ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﺭﮮ ﭘﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺍﮐﮭﺎﮌ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﺴﭙﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺣﺮﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﮐﺮتا ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﻮﻗﻮﻑ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﻣﻘﺪﻡ ﮨﮯ۔

>

مرغے نے سوچا کہ اگر ایک میں نے اذان نہ دی تو کون سا فرق ہے ہو رہا ہے ویدے بھی تو اور مرغے آذان دیتے ہے۔ ﺍﻭﺭ اس طرح ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﺫﺍﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﮨﻔﺘﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺁﺝ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ شروع نہ کیا ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﻮﭺ ﻟﯿﻨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﺗﺎ ﮐﯿﺎ ﻧﺎ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﺮﻏﮯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺿﻌﺪﺍﺭﯼ ﮐﻮ ﭘﺲ ﭘﺸﺖ ﮈﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﭩﮑﭩﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﻧﮯ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ﺍﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﻞ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺮﻏﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻧﮉﮦ ﺩﯾﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﭼﮭﺮﯼ ﭘﮭﯿﺮ ﺩﯾﻨﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﻣﺮﻏﺎ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍٓﭖ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ : ﮐﺎﺵ ﺍﺫﺍﻧﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﻣﺮ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ، ﺁﺝ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﺗﻮ ﻧﺎ ﺳﻨﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ۔ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﻌﺬﺭﺕ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ! ﺍﺳﻼﻡ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺁﺝ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺍﺱ ﻣﺮﻏﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺍﻧﮉﮮ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﮐﺌﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺭﮨﮯ ﺳﮩﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺩﺳﺘﺒﺮﺍﺩﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﭼﺎﻟﯿﮟ ﭼﻼﺋﯽ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ یہی وجہ ہے کہ آج ہماری یہی حالت ہے۔ کاش ہم بھی آپ نے صحیح وقت پر ڈٹے رہے تھے۔ تو آج ہم لوگوں کو یہ دن دیکھنے نہ پڑتے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.